ٹِک ٹاک: بےحیائی کا ابھرتا ہوا سمندر

اگر وقت ہو تو تحریر لازمی پڑھیں اور شیئر بھی کریں۔
ٹک ٹوک بے حیائی پھیلانے والا مقبول ترین اپلکیشن ہے جو دنیا کے ۱۵۰ ممالک میں ۵۰۰ ملین افراد اس ایپس کو استعمال کرتے ہیں۔چائنہ نے اس کو 2016 کے ستمبر مہینے میں لونچ کیا۔دو سال میں ٹک ٹوک کو اتنی شہرت حاصل ہوئی جتنی پچھلےسالوں میں فیس بک اور یوٹیوب کو حاصل نہیں ہوئی، دو سال میں ۵۰۰+ ملین اس کے یوزر ہیں۔ اور دنیا کے ۱۵۰ ممالک کے لوگ اس کو استعمال کرتے ہیں۔
اس ایپش کو لونچ کرنے کا مقصد صرف اور صرف اسلام کو نشانا بنانا تھا۔ آپ اس ایپس پر دیکھیں گے کہ یہودی مذہب کے علاوہ سارے مذاہب کا مذاق بنایا جاتا ہے۔ آپ کو یہودی مذہب کے خلاف ایک ویڈیو بھی اس ایپس پر نہیں ملےگی۔ پھر بھی لوگ اس بے حیائی کے سمندر میں غرق ہوتے جارہے ہیں،۔اور اپنے ہی ہاتھوں اپنے مذہب کا مذاق بنا رہے ہیں۔اس ایپس کو زیادہ تر قوم مسلم استعمال کر رہی ہے۔ اور قوم مسلم میں زیادہ تر ہماری خواتین استعمال کر رہی ہیں۔
مسلم خواتین میک اپ لگاکر ایسے ایسے برہنہ کپڑے پہن کر سامنے آتی ہیں کہ اللہ کی پناہ، ساتھ میں دین ومذہب کا مذاق بناتی ہیں۔ یہودی چاہتے ہی ہیں کہ قوم مسلم کو ننگا برہنہ کیا جائے اور تعلیم سے ہٹا کر انہیں گیم، تین پتی، لوڈو، فیس بک واٹس اپ، اور بے حیائی والا ٹک ٹوک کے استعمال میں لگادیں، تاکہ وہ اپنا قیمتی وقت اس میں لگادیں،۔جب قوم مسلم تعلیم کے میدان میں خالی نظر آئیں گےتو حکومت ہماری رہے گی۔
ان سارے فتنوں کو دیکھ کر غیب داں نبیﷺْ رحمت والے نبیﷺْ ، امت کی بخشش کے لیے رورو کر رب کو منانے والے نبیﷺْ نے ارشاد فرمایا تھا کہ:
“میں تمہارے گھروں میں فتنوں کی جگہیں اس طرح دیکھتا ہوں جیسے بارش گرنے کی جگہوں کو۔“
1400 سال پہلے ہمارے نبیﷺْ پاك نے قیامت تک ہونے والے سارے فتنوں کی پیشن گوئیاں فرمادیں، دوسری جگہ ارشاد فرماتے ہیں:
“اعمال صالحہ میں جلدی کرو قبل اس کے کہ وہ فتنے ظاہر ہو جائیں جو تاریک رات کے ٹکڑوں کی مانند ہوں گے اور ان فتنوں کا اثر ہوگا کہ آدمی صبح کو ایمان کی حالت میں اٹھے گا اور شام کو کافر بن جائے گا اور شام کو مومن ہوگا تو صبح کو کفر کی حالت میں اٹھے گا، نیز اپنے دین ومذہب کو دنیا کی تھوڑی سی متاع کے عوض بیچ ڈالے گا”۔ (مسلم)
آج ہمارا بچہ بچہ نیٹ کے استعمال کو جانتا ہے۔ نیٹ کے استعمال سے جتنا فائدہ اٹھانا چاہیے اس سے کئی گنا انٹرنیٹ کا غلط استعمال کرتے ہیں۔ آج ہماری مسلم خواتین گھر میں رہ کر وہ کام کرتی ہیں جو طوائف عورتیں بھی نہیں کرتیں، وہ بند کمرے وہ کام انجام دیتی ہیں جس کی کسی کو خبر نہیں ہوتی ۔مگر ہماری مسلم خواتین بند کمرے سے لائیو آکر وہ کام انجام دیتی ہے جس کے حسن کو پوری دنیا دیکھتی ہے، اور دیکھ دیکھ کر نبی آخر الزماں آقاﷺْ کی وہ حدیث یاد کرتی ہے کہ:
“دو گروہ ایسے ہیں جو اہل جہنم میں سے ہیں’ لیکن میں نے ان کو نہیں دیکھا، ایک تووہ لوگ ہوں گے جن کے پاس گائے کی دُموں جیسے کوڑے ہوں گے جن کے ساتھ یہ لوگوں کو ماریں گے اور دوسری وہ عورتیں ہوں گی جو کپڑے پہن کر بھی ننگی ہوں گی (یعنی یا تو باریک لباس پہنا ہو گا جس کی وجہ سے جسم نظر آ رہا ہو گا یا پھر ایسا لباس پہنا ہو گا کہ جس نے اُن کے جسم کا کچھ حصہ ڈھانپا ہو گا اور کچھ حصہ ننگا ہو گا) ‘مَردوں کو اپنی طرف مائل کرنے والی اور خود مردوں کی طرف مائل ہونے والی ہوں گی۔ اُن کے سر ایسے ہوں گے جیسے کہ خراسانی نسل کے اونٹ کے کوہان ہوں ( سر کے بالوں کے نت نئے فیشن اور سٹائلز کی طرف اشارہ ہے)۔یہ عورتیں نہ تو جنت میں داخل ہوں گی اور نہ ہی اس کی خوشبو پا سکیں گی’ حالانکہ جنت کی خوشبو اتنے اتنے فاصلے سے محسوس ہو گی”۔
بنت حوا ننگا ناچ رہی ہے۔ ابن آدم اپنی حوس بجھانے کے لیے چسکیاں لے لے کر’ دیکھ رہا ہے۔
😔 نہ شرم نبی نہ خوف خدا 😔
😔 یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں 😔
اسلام نے عورت کو ایک پاکیزہ نظام دیا ہے جس میں اس کی بھلائیاں چھپی ہوئی ہیں۔
اسلام نے عورت کی حفاظت کی خاطر مسجد میں جانے سے روک دیا، اذان و اقامت سے روک دیا، حج کے دوران اونچی آواز میں تلبیہ کہنے سے روک دیا، اونچی آواز میں قرآن پڑھنے سے روک دیا، اونچی آواز سے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی نعت پڑھنے سے روک دیا ہو، اسی مذہب کی نوجوان لڑکیاں ٹک ٹوک پر ناچ رہی ہو تو کتنی تکلیف ہوتی ہوگی ہمارے رحمت والے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو۔۔۔؟
ٹک ٹوک کی بیماری میں صرف لڑکیاں ہی نہیں، بلکہ اس کے بچے بچے دیوانے ہیں اور لڑکیوں کے ساتھ میں اپنا وڈیو ساتھ بناکر لوگوں میں شیئر کرتے ہیں ۔اور اس گناہ کے کام میں لذت محسوس کرتے ہیں۔اس کام میں صرف بچے نہیں بلکہ ان لوگوں کے بھی چہرے سامنے آئے جو والدین ہیں،پڑھےلکے ہیں دین کے جاننے والے ہیں اس بدفعلی میں برابر نظر آئے۔
جب ہمارے رہنما ہی ایسے کاموں میں لگ جائیں تو سمجھ لینا قوم تنزلی کا شکار ہو چکی ہے۔رہنماؤں کو تو چاہیے اس بےحیائی والے ایپلیکشن کے خلاف احتجاج کرنا چاہیے تھا،۔جمعہ کے خطابات میں اس کے خلاف آواز بلند کرنی چاہیے تھی۔مگر اب تو ڈاکٹر ہی بیمار ہونے لگے ہیں تو قوم مسلم کا علاج کیسے کریں گے۔
اگر اب بھی نہ سنبھلیں تو وہ دن دور نہیں جب ہماری بچیاں ٹک ٹوک پر بغیر کپڑے کے برہنہ ناچ دیکھائیں، اور اس بات پر یہود جشن منائیں، ہماری غیرت کو کیا ہو گیا،۔کس حد تک ہم بے شرم ہوگئے، کہ ہم نے اپنی بچیوں کے ہاتھ میں موبائل تھما دیا جس سے وہ اپنی خواہشات بند کمرے میں مٹا رہی ہیں۔
ابھی بچے بالغ نہیں ہوتے مگر وہ سیکس کرتے ہوئے نظر آتے ہیں۔مشت زنی کرکے بالغ ہوتے ہیں۔اغلام بازی کرتے ہیں۔ کتوں بکریوں اور جانوروں کے ساتھ اپنی پیاسیں بجھاتے ہوئے نظر آتے ہیں۔ آپ روزانہ اخبارات کا جائزہ لیں تو پتہ چلےگا کہ ہمارے معاشرے میں ہوکیا رہا ہے اور کیوں ہو رہا ہے۔
خدارا👏 اپنے بچوں پر رحم کریں، اور جہنم کی آگ سے بچائیں۔۔۔!!!
اپنے بچوں پر گہری نظر رکھیں۔
ہماری قوم کو ہمارے نبی پاکﷺْ کی سیرت پسند نہیں۔ہماری قوم کی بچیوں کو پردہ پسند نہیں۔ہمارے مسلم لڑکوں کو چہرے پر داڑھی رکھنا پسند نہیں۔ ہاں اگر پسند ہے تو یہودی اسٹائل میں رکھے جانے والے بال پسند ہے۔یہودی لوگ اگر اپنے چہرے پر داڑھی کو فیشن بناکر رکھتے ہیں تو ہمارا جوان اسی کی طرح اپنے چہرے پر داڑھی رکھتا ہے۔ جیسے وہ کپڑے پہنتا ہے ہمارا جوان ان کی اسٹائل والا لباس پہنتا ہے۔
ہماری بچیوں کو نقاب پسند نہیں۔وہ نقاب و پردے کو دقیانوسی خیال کرتے ہیں وہ اگر کوئی یہودی لڑکی تنگ و چست لباس پہنتی ہے تو ہماری بچیاں اس کی طرح کا لباس خرید کر پہنتی ہے۔مردوں کی طرح بال کٹواتی ہے۔ یہاں تک کے اگر یہودی لڑکیاں بنیان پہنتی ہیں تو ہماری بچیاں بھی اپنا جسم کھول کر لوگوں کو دیکھاتی ہوئی نظر آتی ہیں۔
کس منہ سے ہم کہتے ہیں کہ ہم مسلمان ہیں۔ ہم کون سا کام اسلام والا کرتے ہیں؟
ہم کس منہ سے کہیں ہم کنیز فاطمہ ہیں، غلام مصطفی و غلام حسین ہیں، ہم خود ذلت و رسوائی والے کام کر رہے ہیں۔ یہ سب قیامت کی نشانیاں ہیں جو وجود میں آرہی ہیں۔جو بچ گیا وہ امن پاگیا۔ اپنے گھر والوں کی حفاظت کیجیےاور سیرت مصطفی پر چلنے کا عادی بنا دیجیے، ان شاء اللہ وہ کبھی نہیں بھٹکےگا۔
ہمیں کرنی ہے شہنشاہ بطحا کی رضا جوئی
وہ اپنے ہوگئے تو رحمتِ پروردگار اپنی
أمام غزالی رحمتہ اللہ فرماتے ہیں کہ :
شیطان ہمارا ایسا دشمن ہے جو کبھی رشوت قبول نہیں کرتا باقی دشمن ایسے ہوتے ہیں کہ اگر کوئی ہدیہ یا تحفہ اور رشوت دے تو وہ۔نرم پڑ جاتا ہے اور مخالفت چھوڑ دیں گے اور اگر خوشامد کی۔جائے تو اسے بھی وہ مان جائیں گے۔ مگر شیطان وہ دشمن ہے جو نہ رشوت قبول کرتا ہے اور نہ خوشامد قبول کرتا ہے۔یہ کوئی نہیں کہہ سکتا کہ ہم ایک دن بیٹھ کہ اس کی خوشامد کر لیں گے یہ ہماری جان چھوڑ جائے گا۔ہر گز نہیں چھوڑے گا کیونکہ یہ ایمان کا ڈاکو ہے اور اس کی ہر وقت اس بات پر نظر ہے کہ میں کسی طرح انسان کو ایمان سے محروم کر لوں۔۔۔!
بارش کے بعد ہوا ميں پانی کے تیرتے ہوئے ننھے ننھے کروی (گیند نما Spherical) قطروں پر جب سورج کی سفید روشنی پڑتی ہے تو سات رنگوں میں بکھر جاتی ہے جسے دھنک یا۔۔۔ مزید پڑھیں

آج ہم وٹامن ای کے ان حیران کن فوائد اوراستعمالات کے بارے میں بتائیں گے، جن کے بارے میں آپ نے کبھی بھی نہیں سناہوگا۔وٹامن ای کومختلف اشیاے کے ساتھ۔۔۔ مزید پڑھیں

ملک و ملت کا نام روشن کرنے والوں کا نام روشن رکھنا زندہ قوموں کا شیوہ رہا ہے۔ ہم بحیثیتِ پاکستانی اپنے فرزندِ ملت ڈاکٹر عبدالسلام کی کاوشوں کو سراہتے ہیں۔۔۔ مزید پڑھیں

کچھ کھانے ایسے ہیں جنہیں دوسرے کھانوں میں شامل کر کے کھایا جائے تو وہ ہمارے نظام انہظام پر اچھے اثرات مرتب نہیں کرتے اور بعض دفعہ ہمیں بیمار بھی کر دیتے ہیں۔۔۔ مزید پڑھیں

دنیا میں چند عمارات ایسی بھی ہیں جن کی تعمیر پر ایک شاہانہ بجٹ خرچ کیا گیا ہے جس کے ساتھ ہی انہیں دنیا کی مہنگی ترین عمارات ہونے کا اعزاز حاصل ہوچکا ہے۔۔۔ مزید پڑھیں

ایک دن نائی نے بادشاہ سے عرض کیا،حضور آپ وزیر کی جگہ مجھے وزیر کیوں نہیں بنا دیتے۔ بادشاہ نے مسکرا کر حجام کی طرف دیکھا اور اس سے کہا،ٹھیک ہے لیکن پہلے تم۔۔۔ مزید پڑھیں

یہ تاریخ کا پہلا واقعہ تھا کہ کسی ہندو کی چتا کو آگ نہ لگنے کی وجہ سے شمشان گھاٹ میں ہی دفنا دیا گیا ۔ایک ہندو احترام قران میں اس دنیا کی آگ سے محفوظ رہا ہم اس کتاب پر۔۔۔ مزید پڑھیں

یہ ایک مفلس غریب الوطن کے عزم و ہمت کی انوکھی داستان ہے جو ثابت کرتی ہے کہ آپ ڈٹے رہیں، محنت کرتے رہیں تو بالآخر کامیابی آپ کے قدم چومتی ہے۔۔۔ مزید پڑھیں

برہنہ حالت میں کبھی خود کو آئینے میں مت دیکھیں کیونکہ اس طرح جن آپ پر عاشق ہو سکتے ہیں اور آپ کے ساتھ تعلق کی کوشش کر سکتے ہیں۔ ایسی صورت میں اور کوئی بھی ۔۔۔ مزید پڑھیں

جوزف سوان اور تھامس ایڈیسن نے 1870 کی دہائی میں بجلی کا بلب بنایا۔ اس سے چند برس بعد ایڈیسن نے بجلی بنانے کے سٹیشن نیویارک میں پرل سٹریٹ اور لندن میں ۔۔۔ مزید پڑھیں

انسان نے سونا 8,000 سال قبل دریافت کر لیا تھا۔ 750 سال قبل از مسیح تک یعنی سونے کی دریافت کے سوا پانچ ہزار سال بعد تک انسان صرف سات دھاتوں سے واقف تھا ۔۔۔ مزید پڑھیں

سورہ کہف کی تلاوت فتنے دجال سے نجات کا باعث ہے ۔ خروج دجال قیامت کی بڑی نشانیوں میں سے ایک ہے اور فتنہ دجال زمانے کے شروفتن میں سب سے بڑا فتنہ ہے مکہ مکرمہ۔۔۔ مزید پڑھیں